جنوبی وزیرستان اور باجوڑ ایجنسی میں پاک فوج پر ایک ہی دن میں تین حملے

پاکستانی فوج
کالعدم تحریک طالبان پاکستان ماہانہ قریب 15 حملے کرتے ہیں فوج پر۔

پشاور: کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے ترجمان محمد خراسانی نے اتوار کے روز اپنے ایک بیان میں تین حملوں کا دعویٰ کیا ہے ـ

محمد خراسانی کے دعوے کے مطابق ان کے ساتھیوں نے پہلا حملہ جنوبی وزیرستان کی تحصیل شوال میں کیا ـ یہ حملہ ایک جوابی حملہ تھا جو پاک فوج کے ایک چھاپے کے جواب میں کیا گیا، اس حملے میں ایک فوجی اہلکار ہلاک اور ایک زخمی ہوگیا ـ

دوسرا حملہ جنوبی وزیرستان ہی کی تحصیل لدھا میں پاک فوج کی سرچنگ پارٹی پر بارودی سرنگ کے دھماکے کی صورت میں کیا گیا ـ

اس حملے میں پاک فوج کے تین جوان ہلاک اور چار زخمی ہوئے جن میں حوالدار راج محمد سنکہ سوات، حوالدار نیاز علی سکنہ پشاور، لانس نائیک رحیم اللہ سکنہ کرم ایجنسی، سپاہی فیاض سکنہ پشاور اور سپاہی جنید شامل ہیں ـ

تیسرا حملہ باجوڑ ایجنسی کی تحصیل چمرکنڈ کے علاقے مٹاک سر میں پاک فوج کے جوانوں پر اس وقت بم دھماکے کی صورت میں کیا گیا جب وہ ایک پوسٹ کیلئے سامان لے جا رہے تھے ـ

یاد رہے کہ گزشتہ کئی عرصے سے کالعدم ٹی ٹی پی کے حملوں میں نمایاں اضافہ دیکھنے کو ملا ہے، وہ ہر مہینے کے اختتام پر ماہانہ رپورٹ جاری کرتے ہیں جس میں مہانہ تقریبا 15 سے زائد حملوں کا دعویٰ کرتے نظر آتے ہیں ـ

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

براہ کرم ایڈ بلاکر کو غیر فعال کریں اور ہمارے ساتھ تعاون کریں.

 یا اس ویب سائٹ کو اپنے ایڈ بلاکر سے وائٹ لسٹ کریں. شکریہ

شیئر کریں
error: ڈیٹا کاپی رائٹ محفوظ ہے!