ارزم ضیاء کا بلاگ – قصوروار

ہر انسان بدلہ لیتا ہے، ہر انسان ۔ چاہے وہ غصے سے لے، چاہے میٹھے بول سے لے،چاہے خاموشی سے لے، چاہے تو باتوں سے لے۔ چاہے بتا کر لے، چاہے بنا بتاۓ لے۔ بدلے کا مقصد بس دل جلانا ہوتا ہے اور اس دل کو جلانے کے سو ہنر بڑے بڑے ہاتھوں میں ہیں۔…

مومن ( ارزم ضیاء)

میری پوری زندگی کا حاصل یہ ہے کہ میں نے جتنی بھی دنیا دیکھی، اس دنیا کے کسی کونے میں بھی سکون نہیں ہے۔ میں نے جتنے بھی رشتے بنائے، کسی بھی رشتے کا بھروسہ نہیں ہے۔ کسی سے جتنی بھی محبت کر لی، بدلے میں ہمیشہ خود غرضی ملی۔ کسی سے چاہے جتنا بھی…

تحریر: روشن خٹک (لیجنڈز اف خیبر پختونخوا)

کچھ لوگ خوشبو کی طرح ہوتے ہیں،وہ رہیں یا نہ رہیں، ان کا کردار ہمیشہ مہکتا رہتا ہے، ان کی خوشبو باقی رہتی ہے،ان کا چراغ روشن رہتا ہے،ان کی یا ددلوں میں زندہ رہتی ہے اور جو دلوں میں رہتے ہیں وہ اگر دنیا میں نہ بھی رہیں تب بھی وہ دلوں میں ہی…

ہمراہی (ارزم ضیاء)

ہر انسان کا مزاج الگ ہوتا ہے، لازمی نہیں ہے کہ کوئی اگر آپ سے غصہ کرے یا سخت لہجے میں کوئی بات کہہ دے تو آپ اس شخص کو برا ہی بنا دیں۔ ایسا نہیں ہوتا، ہو سکتا ہے وہ شخص کسی جنجال میں پھنسا ہو، کسی زہنی تھکن سے اسکا مزاج برہم ہو،…

تعلق (ارزم ضیاء)

ہمارا مسئلہ یہ نہیں ہے کہ دنیا والوں کے ساتھ ہمارا تعلق اچھا نہیں ہے، لوگ ہمیں پسند نہیں کرتے، وہ ہماری پیٹھ پیچھے برائی کرتے ہیں، ہمیں دنیا میں ایک برا انسان مانتے ہیں، ہمیں القابات سے نوازتے ہیں، ہمیں بدنام کرتے ہیں، ہمیں نظروں سے گرانے کی کوشش کرتے رہتے ہیں۔۔۔ ہمارا مسئلہ…

اختیار (ارزم ضیاء)

دنیا کا اصول ہے، اچھا کرنے والے کے ساتھ اگر برا بھی ہو جائے تو وہ اس کو بہتر کی طرف لے کر جانے کی تدبیر ہوتی ہے۔ دنیا والوں کے ہاتھ میں کچھ نہیں ہے نا ہی وہ کچھ کر سکتے ہیں، خدا کی بنائی ہوئی کٹھ پتلیاں بیشک اس خوشی میں مسرور رہیں…

تصویر (ارزم ضیاء)

میں نے کہیں ایک تحریر پڑھی تھی جسکا مفہوم تھا کہ امیر اگر آسائش نا چھوڑے بس نمائش چھوڑ دے تو غریب کی زندگی آسان ہو جائے۔ ہمارے معاشرے کا سب سے بڑا المیہ یہ ہی ہے، ہم پیزا کا ایک سلائس بھی بنا تصویر اپلوڈ کیے نہیں کھاتے بنا یہ سوچے کسی کی بھوک…

ناسور (ارزم ضیاء)

بے یقینی کڑوا زہر ہے، جو کبھی بھی زبان کو کوئی اور ذائقہ محسوس نہیں کرنے دیتا۔ یہ زہر ایک دم سے اثر نہیں کر سکتا نا ہی یکدم جسم میں پھیل سکتا ہے۔ یہ آہستہ آہستہ اثر کرتا ہے لیکن اسکا اثر کبھی زائل نہیں ہوتا۔ اسے صدیوں میٹھے پانی میں گھول کر پلانا…

سکون ( ارزم ضیاء)

کبھی بھی دولت، شہرت، یا کامیابی کی دعا نہیں مانگنی چاہیے۔ ہمیشہ سکون کی دعا مانگنی چاہیے۔ اگر سکون ہو تو جھونپڑی میں بھی جنت جیسا سکون ہوتا ہے لیکن اگر محلوں میں بھی سکون نا ہو تو گھر میں قبر سے زیادہ اندھیر اور دوزخ سے زیادہ تکلیف رہتی ہے۔ سکون کا واحد ذریعہ…

ادھورا پن (ارزم ضیاء)

کتنے عجیب ہیں ہم۔ ایک انسان سے رشتہ جوڑنے کے لیے اسے کٹہرے میں لاکر کھڑا کر دیتے ہیں۔ اسکا حسب نسب، ذات پات، رنگ روپ، دولت شہرت سب کو پرکھنا شروع کر دیتے ہیں۔ ترازو میں اسکی نیکی، اسکے خلوص، اسکی شرافت، اسکے کردار، اسکی ہمدردی، اسکے جزبات، اسکی محبت کو کوڑیوں کے بھاؤ…

براہ کرم ایڈ بلاکر کو غیر فعال کریں اور ہمارے ساتھ تعاون کریں.

 یا اس ویب سائٹ کو اپنے ایڈ بلاکر سے وائٹ لسٹ کریں. شکریہ
error: ڈیٹا کاپی رائٹ محفوظ ہے!