چمن سے لے کر بونیر تک ایک صوبہ’افغانیہ’ بنایا جائے، منظور پشتین

اسلام آباد: پشتون تحفظ موومنٹ کے سربراہ منظور پشتین نے کہا ہے کہ اگر پی ٹی ایم کے مطالبات کو ماننے میں تاخیر کی گئی تو اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ یا کسی بھی قسم کا احتجاج کیا جا سکتا ہے، تاہم انہوں نے اس حوالے سے کوئی ختمی تاریخ نہیں دی۔

جمعہ کے دن وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں نیشنل پریس کلب میں پریس کانفرنس کے دوران منظور پشتین نے کہا کہ

“پشتون قوم اپنے خلاف ہونے والے مظالم سے تنگ آ چکی ہے اور ان کا صبر کا پیمانہ لبریز ہو چکا ہے۔”

منظور پشتی نے کہا کے ریاستی اداروں اور حکومت پاکستان نے سینکڑوں پی ٹی ایم کارکنان کے حوالات اور جیلوں میں بند کئے ہوئے ہیں، انہوں نے کہا کہ ہمارا مطالبہ ہے کہ پی ٹی ایم کے کارکنان کو رہا کیا جائے۔

لاپتہ افراد کے حوالے سے سربراہ پی ٹی ایم نے کہا کہ ہمارا مطالبہ ہے کہ لاپتہ افراد کو عدالت میں پیش کیا جائے اور ان پر مقدمات چلائے جائیں تاکہ پتہ چلے کہ ان کا قصور کیا ہے۔

ایک صحافی کے سوال پر منظورپشتین نے کہا کہ صرف پشتون تحفظ موومنٹ کی ہی نہیں بلکہ ہر پشتون کے لئے دلی خواہش ہے کہ چمن سے لے کر چترال اور بونیر تک ایک صوبہ بنایا جائے جس سے پختونخواہ یا افغانیہ جیسا کوئی بھی نام دے دیا جائے۔

شیئر کریں
براہ کرم ایڈ بلاکر کو غیر فعال کریں اور ہمارے ساتھ تعاون کریں.

 یا اس ویب سائٹ کو اپنے ایڈ بلاکر سے وائٹ لسٹ کریں. شکریہ

شیئر کریں
error: ڈیٹا کاپی رائٹ محفوظ ہے!