ضلع کرک صاف پانی منصوبے میں اڑھائی کروڑ کی کرپشن کا انکشاف

کرک: (خوشحال آن لائن) خیبرپختونخواہ کے ضلع کرک میں صاف پانی کی فراہمی کے منصوبے میں مبینہ بدعنوانی کا کیس خیبرپختونخواہ احتساب بیورو کے حوالے کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخواہ کے ضلع کرک میں صاف پانی کے فراہمی کے منصوبے میں مبینہ طور اڑھائی کروڑ روپے کی بدعنوانی کی گئی ہے، اس کی تحقیقات کیلئے یہ کیس قومی احتساب بیورو نے اینٹی کرپشن خیبر پختونخواہ کو بھیج دیا ہے۔

قومی احتساب بیورو کے مطابق سال 2018 میں ضلع کرک میں صاف پانی منصوبے میں بدعنوانی کی تحقیقات شروع کی گئی تھی۔

نیب کے مطابق تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ رولز کی خلاف ورزی کے باعث قومی خزانے کو ایک کروڑ، 53 لاکھ، 99 ہزار 4سو 90 روپے جبکہ غیر معیاری کام کے باعث ایک کروڑ، 10 لاکھ، 32 ہزار، ،202 روپے کا نقصان پہنچایا گیا ہے۔

قومی احتساب بیورو کی جاب سے جاری اعداد و شمار کے مطابق اس مبینہ بدعنوانی میں مجموعی طور پر قومی خزانے کو 2 کروڑ، 63 لاکھ، 99 ہزار اور 692 روپے کا نقصان پہنچایا گیا۔

ْقومی احتساب بیورو کے مطابق اس معاملے پر ریجنل بورڈ اجلاس میں بحث ہوئی اور اسی اجلاس میں یہ فیصلہ کیا گیا کہ معاملے کو تحقیقات کیلئے اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ ارسال کیا جائیگا۔

اس اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ مزید کاروائی اینٹی کرپشن کی جانب سے کی جائیگی۔ قومی ابتساب بیورو نے اینٹی کرپشن کے حکام کو یہ ہدایت کی ہے کہ وہ نیب کے دفتر سے کیس ریکارڈ حاصل کر کے کاروائی شرع کریں۔

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

براہ کرم ایڈ بلاکر کو غیر فعال کریں اور ہمارے ساتھ تعاون کریں.
یا اس ویب سائٹ کو اپنے ایڈ بلاکر سے وائٹ لسٹ کریں. شکریہ

شیئر کریں
error: ڈیٹا کاپی رائٹ محفوظ ہے!